شمالی وزیرستان کے عوام نے سیول انتظامیہ کے خلاف اختجاجی مظاہرہ

0810270d-6e08-48a4-9bd9-82d48aa70b89-780x405.jpg

شمالی وزیرستان کے ہیڈکواٹر میرانشاہ گاوں چهوٹا دتہ خیل قبائل کے عوام نے آپریشن کے دوران منہدم مکانات کی معاوضہ نہ ملنے پر سیول انتظامیہ کے خلاف اختجاجی مظاہرہ کیا۔

میرانشاہ پریس کے سامنے مظاہرین نے سیول انتظامیہ کے خلاف شدیدنعرے بازی کی اور پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے جن پر معاوضہ ادائیگی کے مطالبات درج تھے.

مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے ملک عبد الخلیل نے کہا کہ پندرہ اپریل سے گاوں چهوٹا دتہ خیل قبائل نے احتجاج  کے طور پر پولیو مہم سے بائیکاٹ جاری رکھا ہوا ہے جبکہ محکمہ صحت اور سیول انتظامیہ سینکڑوں بچوں کے مستقبل کو نظر انداز کر رہے ہیں۔

اس موقع پر دتہ خیل قبائل کے عابد خان نے کہا کہ گاوں چهوٹا دتہ خیل قبائل کے سینکڑوں مکانات منہدم اور درجنوں مکانات کو جزوی نقصان پہنچا ہے دو سال سے زیادہ عرصہ ہوگیا ہے کہ گاوں کے متاثرہ گهروں کا سروے کیا ہے لیکن بدقسمتی سے اب تک 327 خاندانوں کو منہدم مکانات کے معاوضے کی امدادی رقم نہی ملی۔

انہوں نے کہا کہ سردی اور گرمی کے موسم ٹینٹوں میں گزارے ہیں اس دوران گاوں کے دو بچوں کی اموات سردی کی وجہ سے واقع ہوئی ہےعوام کا صبر و برداشت ختم ہوگیا ہے اگر گاوں چهوٹا دتہ خیل قبائل کے کسی بچے کو پولیو وائرس نے متاثر کیا تو زمہ داروں کے خلاف ایف آئی آر درج کریں گے۔

انہوں نے دھمکی دی کہ اگر ہمارے مطالبات کو تسلیم نہ کیا گیا تو بنوں میرانشاہ مین روڈ کو ہرقسم کے ٹریفک کیلئے بند کریں گے اور احتجاج کو مزید وسعت دینگے۔